156 views 7 mins 0 comments

Mian Fazal Hussain

In BIOGRAPHY
October 05, 2022
Mian Fazal Hussain

Mian Fazal Hussain

Mian Fazal Hussain was born in Punjab on July 14, 1877. He belongs to the Rajput family. His father was District Judge. Fazal Hussain received his early education from Government College Lahore. Where Allama Iqbal was his classmate.

Fazal Hussain visited England and secured a degree in Bar at law. He had started his career as a lawyer. Later, he was shifted to Lahore and from there he started his political career. He had served Anjuman-i-Himayat-i-Islam and Islamia College Lahore initially. His most fascinating contributions were: he had served as a member of the viceroy council, as an Education Minister, worked for reservation of quota seats for Muslims, raised of literacy rate, great advocate of a separate electorate, believed in Muslims-other community unity, and in particular the formation of Punjab unionist party.

Early life:

Mian Fazal Hussain was born on July 14, 1877. He belongs to the Rajput family. His father’s name was Khan Bahadur Hussain Bakhsh. His father reached the rank of the district judge. Initially, his father had started his career with an occasional caliber job.

Education:

Mian Fazal Hussain received his early education from Government College Lahore. Allama Iqbal was his schoolfellow similar to his succor. After completing his early education, he then visited England and took a degree in bar at law. In 1901 he started his career as a lawyer in Sialkot. Because of certain reasons he then shifted to Lahore in 1905.

Political career:

After shifting to Lahore, Fazal Hussain had taken much interest in the affairs of Anjuman-i-Himayat-i-Islam. Resultantly, in 1905, he became a member of the managing committee and in the same year, he was raised to the post of the Secretary of the faculty committee. He also rendered great services from the platform of Islamia College Lahore.

In 1917, he was assigned the office of general secretary of the new Punjab Muslim League. He retained the position till 1920. Before he was a member of Congress but when Congress adopted non-cooperation and therefore the boycott of Councils, he resigned from its membership.

In 1916, he was nominated for Punjab general assembly. He delivered great services for the safeguarding of the rights of individuals under this banner. In 1921, he had assigned the portfolio of education minister.

Services:

Mian Fazal Hussain had rendered great services for Indians and particularly for Muslims throughout his life. From the year 1905, he served Anjuman-i-Himayat-i-Islam and Islamia College Lahore so as to renaissance Muslims through modern education. He raised the literacy rate from 2.42% to 6.71% after becoming Education Minister. He also managed to order maximum seats for Muslims in Government College Lahore and king Edward medical college Lahore. He also demanded the allocation of seats for Muslims in provincial civil services. He was an excellent advocate of the Separate Electorate. that he had started a campaign.

When the Muslims were greatly engulfed in Khilafat Movement, he was the one who at that crucial time revived the Punjab Provincial League to the safeguard interests of Muslims. He had arranged the All India Muslim League session at Lahore on 25-26 May 1926. Quaid had presided over the session. During this session, Quaid stated that “no majority shall be reduced to a minority or maybe equality.” This session has actually held the safeguarding of the Muslim majority provinces. The stress of this session was later included in Jinnah’s fourteen points.

Fazal Hussain was a great advocate of communal harmony. For this purpose, he formed the Punjab National Unionist Party, generally called Unionist Party in 1926. This party was a mix of Muslims, Sikhs, and Hindus. Its membership was open to each person regardless of caste and creed. However, it had been reported that this party was an absolute Muslim landlord’s party under the leadership of Sir Fazal Hussain.

In 1930, he was elected to the Viceroy council. Fazal Hussain had played a vital role in the attainment of the rights of Indians, especially in the affairs of Muslim interests. According to Coatman, Director of knowledge, ‘Fazal Hussain is a man of determination and courage. To realize his goals he can sacrifice everything that he possesses’.

He was undoubtedly the first one who had successfully defended the false propagation of the Indian press. He also successfully countered English bureaucrats and made them kneel down their knees. Iqbal distinguished him as a good loyalist of Punjab. On the other hand, Quaid had also great respect for him. Quaid wrote about him that “we desire a man of your caliber and knowledge.”

Fazal Hussain’s politics was free from favoritism and everyone’s other ills. He was the one who embodied Muslims with great courage and confidence. Ultimately, his unending services paved the way for the establishment of an independent state for Muslims of the sub-continent.

Achievements:

Sir Fazal Hussain was the architect behind the scheme of establishing an employment quota for Muslims in Indian government officials.

He was the founding father of the Punjab Unionist Party. He was a con to the thought of establishing Pakistan. He was a great advocate of communal unity. He had appointed a Hindu because the head of the unionist party when he was nominated for the Viceroy council.

He became a member of the legislature of Punjab before the Montague-Chelmsford reforms. In the year 1930, he was nominated as a member of the Viceroy Council for India.

Demise:

Mian Fazal Hussain was unquestionably the foremost brilliant Muslim, who had strived with great courage and determination for securing the rights of Indians. But due to fading health, he died on July 09, 1936.

میاں فضل حسین

میاں فضل حسین 14 جولائی 1877 کو پنجاب میں پیدا ہوئے، ان کا تعلق راجپوت خاندان سے ہے۔ ان کے والد ڈسٹرکٹ جج تھے۔ فضل حسین نے ابتدائی تعلیم گورنمنٹ کالج لاہور سے حاصل کی۔ جہاں علامہ اقبال ان کے کلاس فیلو تھے۔ فضل حسین انگلینڈ گئے اور بار ایٹ لاء میں ڈگری حاصل کی۔ انہوں نے اپنے کیریئر کا آغاز بطور وکیل کیا تھا۔ بعد ازاں انہیں لاہور منتقل کر دیا گیا اور وہیں سے انہوں نے اپنی سیاسی زندگی کا آغاز کیا۔ آپ نے ابتدا میں انجمن حمایت اسلام اور اسلامیہ کالج لاہور میں خدمات انجام دیں۔

ان کی سب سے دلچسپ شراکتیں یہ تھیں: انہوں نے وائسرائے ایگزیکٹو کونسل کے ممبر کی حیثیت سے خدمات انجام دیں، وزیر تعلیم کی حیثیت سے، مسلمانوں کے لیے کوٹہ کی نشستیں ریزرو کرنے، شرح خواندگی میں اضافہ، علیحدہ رائے دہندگان کے عظیم حامی، مسلمانوں اور دیگر کمیونٹی کے اتحاد کے قائل، اور سب سے بڑھ کر پنجاب یونینسٹ پارٹی کا قیام۔

ابتدائی زندگی

میاں فضل حسین 14 جولائی 1877 کو پیدا ہوئے، ان کا تعلق راجپوت خاندان سے ہے۔ ان کے والد کا نام خان بہادر حسین بخش تھا۔ اس کے والد ڈسٹرکٹ جج کے عہدے تک پہنچ گئے۔ شروع میں ان کے والد نے اپنے کیرئیر کا آغاز کم صلاحیت کی نوکری سے کیا تھا۔

تعلیم

میاں فضل حسین نے ابتدائی تعلیم گورنمنٹ کالج لاہور سے حاصل کی۔ علامہ اقبال ان کے کلاس فیلو ہونے کے ساتھ ساتھ ان کے بہترین دوست بھی تھے۔ ابتدائی تعلیم مکمل کرنے کے بعد پھر انگلینڈ چلے گئے اور بار ایٹ لاء کی ڈگری حاصل کی۔ 1901 میں انہوں نے سیالکوٹ میں وکیل کی حیثیت سے اپنے کیریئر کا آغاز کیا۔ بعض وجوہات کی بنا پر وہ پھر 1905 میں لاہور منتقل ہو گئے۔

سیاسی کیریئر

لاہور منتقل ہونے کے بعد فضل حسین نے انجمن حمایت اسلام کے معاملات میں کافی دلچسپی لی۔ نتیجتاً 1905ء میں وہ منیجنگ کمیٹی کے رکن بنے اور اسی سال کالج کمیٹی کے سیکرٹری کے عہدے پر فائز ہوئے۔ انہوں نے اسلامیہ کالج لاہور کے پلیٹ فارم سے بھی گراں قدر خدمات انجام دیں۔

سنہ 1917 میں انہیں نئی ​​پنجاب مسلم لیگ کے جنرل سیکرٹری کا عہدہ سونپا گیا۔ وہ 1920 تک اس عہدے پر برقرار رہے۔ اس سے پہلے وہ کانگریس کے رکن تھے لیکن جب کانگریس نے عدم تعاون اور کونسلوں کے بائیکاٹ کو اپنایا تو انہوں نے اس کی رکنیت سے استعفیٰ دے دیا۔ 1916 میں انہیں پنجاب قانون ساز کونسل کے لیے نامزد کیا گیا۔ انہوں نے اس بینر تلے لوگوں کے حقوق کے تحفظ کے لیے گراں قدر خدمات سرانجام دیں-1921 میں انہیں وزیر تعلیم کا قلمدان سونپا گیا۔

خدمات

میاں فضل حسین نے زندگی بھر ہندوستانیوں اور بالخصوص مسلمانوں کے لیے عظیم خدمات انجام دیں۔ سنہ 1905 سے آپ نے جدید تعلیم کے ذریعے مسلمانوں کی نشاۃ ثانیہ کے لیے انجمن حمایت اسلام اور اسلامیہ کالج لاہور کی خدمات انجام دیں۔ انہوں نے وزیر تعلیم بننے کے بعد شرح خواندگی کو 2.42% سے بڑھا کر 6.71% کر دیا۔ وہ گورنمنٹ کالج لاہور اور کنگ ایڈورڈ میڈیکل کالج لاہور میں مسلمانوں کے لیے زیادہ سے زیادہ نشستیں ریزرو کرنے میں بھی کامیاب رہے۔ انہوں نے صوبائی سول سروسز میں مسلمانوں کے لیے سیٹیں مختص کرنے کا بھی مطالبہ کیا۔ وہ الگ الگ انتخابی حلقوں کے بہت بڑے وکیل تھے۔ جس کے لیے انہوں نے مہم شروع کر رکھی تھی۔

جب مسلمان تحریک خلافت میں بہت زیادہ لپٹے ہوئے تھے تو وہ وہ شخص تھا جس نے اس اہم وقت میں مسلمانوں کے مفادات کے تحفظ کے لیے پنجاب پراونشل لیگ کو زندہ کیا۔ انہوں نے 25-26 مئی 1926 کو لاہور میں آل انڈیا مسلم لیگ کے اجلاس کا اہتمام کیا تھا۔ اس اجلاس کی صدارت قائد نے کی تھی۔ اس سیشن میں قائد نے فرمایا تھا کہ ’’کوئی اکثریت کو اقلیت یا برابری تک کم نہیں کیا جائے گا‘‘۔ یہ اجلاس دراصل مسلم اکثریتی صوبوں کے تحفظ کے لیے منعقد کیا گیا تھا۔ اس اجلاس کے مطالبات کو بعد میں جناح کے چودہ نکات میں شامل کیا گیا۔

فضل حسین فرقہ وارانہ ہم آہنگی کے بڑے علمبردار تھے۔ اس مقصد کے لیے انہوں نے 1926 میں پنجاب نیشنل یونینسٹ پارٹی بنائی تھی جسے عام طور پر یونینسٹ پارٹی کہا جاتا ہے۔ یہ پارٹی مسلمانوں، سکھوں اور ہندوؤں کا مرکب تھی۔ اس کی رکنیت بلا تفریق رنگ و نسل ہر فرد کے لیے کھلی تھی۔ تاہم، یہ اطلاع ملی کہ یہ جماعت سر فضل حسین کی قیادت میں ایک مطلق العنان مسلم جاگیرداروں کی جماعت میں تبدیل ہو گئی۔ 1930 میں وہ وائسرائے ایگزیکٹو کونسل کے لیے منتخب ہوئے۔ فضل حسین نے ہندوستانیوں کے حقوق بالخصوص مسلمانوں کے مفادات کے حصول کے لیے اہم کردار ادا کیا تھا۔

کوٹ مین، ڈائریکٹر آف انفارمیشن کے مطابق، ‘فضل حسین عزم اور حوصلے کے آدمی ہیں۔ اپنے اہداف کے حصول کے لیے وہ اپنے پاس موجود ہر چیز کو قربان کر سکتا ہے۔‘‘ بلاشبہ وہ پہلے شخص تھے جنہوں نے ہندوستانی پریس کے جھوٹے پروپیگنڈوں کا کامیابی سے دفاع کیا۔ اس نے انگریز بیوروکریٹس کا بھی کامیابی سے مقابلہ کیا اور انہیں گھٹنے ٹیکنے پر مجبور کردیا۔

اقبال انہیں پنجاب کے ایک عظیم وفادار کے طور پر ممتاز کرتے ہیں۔ دوسری طرف قائد بھی ان کا بہت احترام کرتے تھے۔ قائد نے ان کے بارے میں لکھا تھا کہ ’’ہمیں آپ کے قابل اور تجربہ کار آدمی چاہیے‘‘۔ فضل حسین کی سیاست جانبداری اور دیگر تمام برائیوں سے پاک تھی۔ وہ وہ شخص تھا جس نے مسلمانوں کو بڑی ہمت اور اعتماد کے ساتھ مجسم کیا۔ بالآخر ان کی نہ ختم ہونے والی خدمات نے برصغیر کے مسلمانوں کے لیے ایک آزاد ریاست کے قیام کی راہ ہموار کی۔

کامیابیاں

نمبر1:انڈین سول سروس میں مسلمانوں کے لیے ملازمت کا کوٹہ قائم کرنے کی اسکیم کے پیچھے سر فضل حسین مرکزی معمار تھے۔

نمبر2:وہ پنجاب یونینسٹ پارٹی کے بانی والد تھے۔ وہ قیام پاکستان کے خیال کے مخالف تھے۔ وہ فرقہ وارانہ اتحاد کے بڑے حامی تھے۔ اس نے ایک ہندو کو یونینسٹ پارٹی کا سربراہ مقرر کیا تھا جب وہ وائسرائے ایگزیکٹو کونسل کے لیے نامزد کیا گیا تھا۔

نمبر3:وہ مونٹیگ-کیمسفورڈ اصلاحات سے قبل پنجاب کی قانون ساز اسمبلی کے رکن بنے۔ 1930ء میں انہیں وائسرائے کونسل برائے ہند کا رکن نامزد کیا گیا۔

انتقال

میاں فضل حسین بلاشبہ سب سے ذہین مسلمان تھے جنہوں نے ہندوستانیوں کے حقوق کے حصول کے لیے بڑی ہمت اور عزم کے ساتھ جدوجہد کی۔ لیکن خرابی صحت کی وجہ سے 09 جولائی 1936 کو انتقال کر گئے۔

/ Published posts: 3237

موجودہ دور میں انگریزی زبان کو بہت پذیرآئی حاصل ہوئی ہے۔ دنیا میں ۹۰ فیصد ویب سائٹس پر انگریزی زبان میں معلومات فراہم کی جاتی ہیں۔ لیکن پاکستان میں ۸۰سے ۹۰ فیصد لوگ ایسے ہیں. جن کو انگریزی زبان نہ تو پڑھنی آتی ہے۔ اور نہ ہی وہ انگریزی زبان کو سمجھ سکتے ہیں۔ لہذا، زیادہ تر صارفین ایسی ویب سائیٹس سے علم حاصل کرنے سے قاصر ہیں۔ اس لیے ہم نے اپنے زائرین کی آسانی کے لیے انگریزی اور اردو دونوں میں مواد شائع کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ جس سے ہمارےپاکستانی لوگ نہ صرف خبریں بآسانی پڑھ سکیں گے۔ بلکہ یہاں پر موجود مختلف کھیلوں اور تفریحوں پر مبنی مواد سے بھی فائدہ اٹھا سکیں گے۔ نیوز فلیکس پر بہترین رائٹرز اپنی سروسز فراہم کرتے ہیں۔ جن کا مقصد اپنے ملک کے نوجوانوں کی صلاحیتوں اور مہارتوں میں اضافہ کرنا ہے۔

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram