185 views 0 secs 0 comments

چھوٹی عمر میں قرآن حفظ کرنے کے فائدے

In اسلام
October 16, 2022
چھوٹی عمر میں قرآن حفظ کرنے کے فائدے

قرآن کے ساتھی سے کہا جائے گا: پڑھو اور درجہ بلند کرو، اسی طرح پڑھو جس طرح تم دنیا میں پڑھا کرتے تھے، کیونکہ تمہارا درجہ اس آخری آیت پر ہوگا جسے تم پڑھو گے۔ الترمذی (2914) اور ابوداؤد (1464)

مقدس کتاب القرآن کو حفظ کرنا ایک آزمائش ہے جس میں صبر، استقامت، محنت، عزم اور تسلسل جیسی صفات کی ضرورت ہوتی ہے۔ مسلمان خواہ وہ بھائی ہوں، بہنیں ہوں یا بچے، اگر وہ اس عظیم کام کو شروع کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں، تو اسے جاری رکھنے کے لیے سنجیدہ نقطہ نظر کی ضرورت ہوگی۔ آج ہم کم عمری میں قرآن حفظ کرنے کی اہمیت پر بات کرنے جارہے ہیں۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ آپ کسی بھی عمر میں بغیر کسی ہچکچاہٹ کے قرآن حفظ کر سکتے ہیں، لیکن چھوٹی عمر میں شروع کرنا درج ذیل وجوہات کی بناء پر مفید ثابت ہوگا۔

چھوٹی عمر میں حفظ قرآن کی اہمیت
چھوٹی عمر میں قرآن حفظ کرنے کے چند فائدے یہ ہیں۔

نمبر1. یہ اللہ کے ساتھ ایک مضبوط تعلق پیدا کرتا ہے۔
جب آپ چھوٹی عمر میں اللہ کی کتاب کو یاد کرنا شروع کر دیں گے تو آپ کا رب سے گہرا تعلق ہو جائے گا کیونکہ آپ اس کے کلام کو نہ صرف اپنے دماغ میں بلکہ اپنے دل میں محفوظ کر رہے ہیں۔

جب بھی آپ اپنا سبق شروع کریں گے، آپ کے استاد آپ کی آن لائن قرآن حفظ کلاسز میں مجموعی معنی، وحی کی وجہ، اور وحی کے منظر نامے پر گفتگو کریں گے۔ یہ نوجوانوں کے دلوں کو سیرت نبوی کو اپنانے اور اپنے رب کو بہتر طریقے سے پہچاننے کی ترغیب دے گا۔

نمبر2. یادداشت کا حصہ طویل مدتی یادداشت میں برقرار رکھا جاتا ہے۔
انسانی دماغ میں دو طرح کی یادداشت ہوتی ہے: قلیل مدتی اور طویل مدتی یادداشت۔ جب آپ قرآن کا حفظ شدہ حصہ اپنے استاد کے سامنے پڑھتے ہیں، تو یہ آپ کی مختصر مدت کے حافظے میں ہوتا ہے۔

جب آپ اسی سبق پر نظر ثانی کرتےاور دہراتے رہتے ہیں، تو یہ آپ کی طویل مدتی یادداشت میں چلا جاتا ہے جو کہ آپ کے جوان ہونے پر قدرتی طور پر بہت اچھا ہوتا ہے۔ نوجوان توانا ہوتے ہیں اور نظرثانی کے عمل کو جوش کے ساتھ جاری رکھ سکتے ہیں اور اس طرح وہ اچھے حافظ مانے جاتے ہیں۔

نمبر3. یہ آپ کے آئی کیو کو بڑھاتا ہے اور دماغی صحت کو بہتر بناتا ہے۔
آپ سبق پر نظر ثانی کرنے اور یاد رکھنے کے لیے جتنا زیادہ اپنی یادداشت کو جھٹکا دیں گے، اتنا ہی بہتر آپ کا آئی کیو بڑھتا ہے اور اس لیے یہ آپ کی دماغی صحت کو بہتر بناتا ہے۔ قرآنی آیات کرشماتی ہیں اور وہ آپ کے دماغ اور دل کو ایک ساتھ برقرار رکھتی ہیں تاکہ آپ کو اپنے دماغ کو عام آدمی سے زیادہ استعمال کرنے میں مدد ملے۔

اسی لیے کہا جاتا ہے کہ حافظ قرآن کا حافظہ بہت اچھا اور آئی کیو لیول بہت زیادہ ہے۔

نمبر4. اسباق پر کثرت سے نظر ثانی کی جاتی ہے۔
کم عمری میں قرآن حفظ کرنے کی ایک اور اہمیت یہ ہے کہ آپ کو اپنے حفظ کے لیے وقف کرنے کے لیے کافی وقت ملتا ہے اور آپ کو اپنے حفظ کے حصے پر زیادہ بار نظر ثانی کرنے کے مواقع ملتے ہیں۔

کم عمری میں آپ اپنی ملازمت، گھر کے کاموں، منصوبہ بندی اور دیگر مسائل میں اتنے مصروف نہیں ہوتے، اس لیے آپ جلد قرآن کا حفظ کر سکتے ہیں اور پھر اس پر نظر ثانی کرتے رہتے ہیں۔

نمبر5. نوجوان ذہن کم مشغول ہوتے ہیں۔
ہاں یہ سچ ہے! نوجوان ذہن دنیاوی خیالات اور دیگر متفرق ذمہ داریوں میں کم مشغول ہوتے ہیں۔ یہاں تک کہ اسکول میں پڑھائی بھی بہت آسان ہوتی ہے جب بچے اپنے پرائمری اور پری سیکنڈری لیول میں ہوتے ہیں۔

لہٰذا، 6 سے 7 سال کی عمر میں ہی قرآن حفظ کرنا ایک اچھی بات ہے۔ قرآن حفظ کے بہترین اسکولوں میں شامل ہو کر اپنے بچوں کو تیزی سے حفظ کرنے میں مدد کریں۔

نمبر6. دماغ بھی آپ کے ساتھ بوڑھا ہو جاتا ہے۔
گزرتے سالوں کے ساتھ آپ کا دماغ بھی بوڑھا ہوتا جاتا ہے۔ آپ چیزوں کو بھول جاتے ہیں۔ یہ ہمیشہ ہر ایک فرد کے ساتھ نہیں ہوتا ہے لیکن نوجوانوں کے دماغوں میں ان کی مسلسل اعصابی نشوونما کی وجہ سے صلاحیتیں ہوتی ہیں۔

تو کم عمری میں حفظ کا موقع کیوں گنوا دیا جائے؟ والدین ہونے کے ناطے، آپ کو اپنے بچوں کو حفظ قرآن کی کلاسوں میں داخل کروانا چاہیے۔

نمبر7. یہ آپ کی شخصیت کی تشکیل کرے گا۔
جتنی جلدی آپ حفظ کا سفر شروع کریں گے آپ کی شخصیت اتنی ہی بہتر ہوگی۔ چھوٹی عمر میں جب آپ اللہ کی کتاب سے وابستہ ہو جاتے ہیں تو آپ کو حقیقت کا علم ہوتا ہے اور اللہ سبحانہ و تعالیٰ کے حکم کے مطابق اپنی شخصیت کو ڈھالنے کی کوشش کرتے ہیں۔

اس لیے آپ نے دیکھا ہوگا کہ شروع سے 8 سال تک کی ترقی بہت اہم ہے۔ آپ جو کچھ بھی دیکھیں گے، سیکھیں گے اور دیکھیں گے، ان سب کا اثر بعد میں آپ کی شخصیت پر پڑے گا۔ لہٰذا، صحیح راستے پر چلنے کے لیے اپنی زندگی کے ابتدائی سالوں میں قرآن حفظ کرنا بہترین ہے۔

نمبر8. یہ کردار سازی میں مددگار ثابت ہوگا۔
قرآن مجید میں جو کہانیاں، مہمات، حکایات، احکامات اور مکالمے پیش کیے گئے ہیں وہ واقعی ایک مضبوط کردار کی تعمیر میں مددگار ہیں جو ہر مسلمان کو ہونا چاہیے۔

فتنہ کے اس دور میں جہاں صحیح کو غلط اور غلط کو صحیح سمجھا جاتا ہے، ہر مسلمان والدین اپنے بچوں کی صحیح کردار سازی اور تعمیر کی تلاش میں ہیں۔ یہ صرف اپنے بچوں کو اللہ کی کتاب سے جوڑنے سے ہی ممکن ہے تاکہ نوجوان خود سیکھ سکیں کہ کیا صحیح ہے اور کیا غلط۔

نمبر9. آپ کو زندگی کا مقصد جلد معلوم ہو جائے گا۔
قرآن اس دنیا کے آخر تک لوگوں کے لیے ہدایت کی کتاب ہے۔ ہم جانتے ہیں کہ اب کوئی اور کتاب نہیں ہے اور نہ کوئی استاد ہماری رہنمائی کے لیے آنے والا ہے۔ لہذا، اگر آپ صحیح فہم اور توجہ کے ساتھ قرآن کو حفظ کریں گے، تو آپ اپنے وجود کا مقصد جان لیں گے۔

نمبر10. آپ کو بہت زیادہ انعام دیا جائے گا۔
اللہ تعالیٰ نے کبھی کسی ایک یا معمولی کام کو ضائع نہیں ہونے دیا۔ قرآن کے ایک حرف پر دس گنا ثواب ملے گا۔ تصور! پورا قرآن حفظ کرنے سے آپ کو کتنے انعامات ملیں گے؟
ہر لفظ جس پر آپ ہکلاتے ہیں، ہر محنت اور ہر کوشش جو آپ کرتے ہیں اللہ کی طرف سے انعامات کی صورت میں آپ کو واپس کیا جائے گا۔ انشاء اللہ

نمبر11. قرآن آخرت میں آپ کا نجات دہندہ ہوگا۔
بہت سی صحیح (مستند) احادیث سے معلوم ہوتا ہے کہ قرآن قیامت کے دن اپنے پڑھنے والے کی شفاعت کرے گا۔

ابو امامہ الباہلی کہتے ہیں

میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے سنا: قرآن پڑھا کرو، کیونکہ یہ قیامت کے دن اپنے ساتھیوں کی شفاعت کرے گا۔ مسلم (804)

نمبر12. قرآن ہی قبر میں نجات کا واحد ذریعہ ہے۔
قبر میں اپنے آپ کو محفوظ اور محفوظ رکھنے کے لیے سورۃ الملک کی تلاوت کرنے کو کہا گیا ہے۔ ایک حدیث میں آیا ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ہر رات سونے سے پہلے سورۃ الملک پڑھنے کا مشورہ دیا۔ ایسا کرنے سے کہا جاتا ہے کہ تم قبر کی سختی سے محفوظ رہو گے۔

ذرا تصور کریں! اگر آپ نے چھوٹی عمر میں ہی اس سورت کو حفظ کر لیا اور روزانہ سونے سے پہلے اس کی تلاوت کرتے رہیں تو آپ کتنے محفوظ رہیں گے؟

نتیجہ
جوانی میں قرآن حفظ کرنا بہت ضروری ہے۔ ابتدائی سالوں میں، آپ نظم و ضبط کے ساتھ توجہ مرکوز کرتے ہیں اور کسی بھی عمر کے مقابلے میں اپنی حفظ قرآن کی کلاسوں میں بہتر طور پر شرکت کر سکتے ہیں۔ اس لیے اس کی اہمیت کو نظر انداز نہ کریں اور فائدہ اٹھانے کی کوشش کریں۔

/ Published posts: 3237

موجودہ دور میں انگریزی زبان کو بہت پذیرآئی حاصل ہوئی ہے۔ دنیا میں ۹۰ فیصد ویب سائٹس پر انگریزی زبان میں معلومات فراہم کی جاتی ہیں۔ لیکن پاکستان میں ۸۰سے ۹۰ فیصد لوگ ایسے ہیں. جن کو انگریزی زبان نہ تو پڑھنی آتی ہے۔ اور نہ ہی وہ انگریزی زبان کو سمجھ سکتے ہیں۔ لہذا، زیادہ تر صارفین ایسی ویب سائیٹس سے علم حاصل کرنے سے قاصر ہیں۔ اس لیے ہم نے اپنے زائرین کی آسانی کے لیے انگریزی اور اردو دونوں میں مواد شائع کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ جس سے ہمارےپاکستانی لوگ نہ صرف خبریں بآسانی پڑھ سکیں گے۔ بلکہ یہاں پر موجود مختلف کھیلوں اور تفریحوں پر مبنی مواد سے بھی فائدہ اٹھا سکیں گے۔ نیوز فلیکس پر بہترین رائٹرز اپنی سروسز فراہم کرتے ہیں۔ جن کا مقصد اپنے ملک کے نوجوانوں کی صلاحیتوں اور مہارتوں میں اضافہ کرنا ہے۔

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram