198 views 2 secs 0 comments

روضہ امام حسین رضی اللہ عنہ، عراق

In اسلام
February 12, 2023
روضہ امام حسین رضی اللہ عنہ، عراق

روضہ امام حسین رضی اللہ عنہ، عراق

یہ کربلا میں حسین رضی اللہ عنہ کی آرام گاہ ہے۔ وہ علی رضی اللہ عنہ کے بیٹے اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پوتے تھے۔

حسین رضی اللہ عنہ کی ولادت شعبان 4ھ میں ہوئی۔ انہیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس لایا گیا، وہ بہت خوش تھے۔ انہوں نے ایک کھجور چبا کر نومولود کے منہ میں ڈال دی جسے وہ چوسنے لگے۔ ان کے معدے میں سب سے پہلے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا لعاب دہن گیا تھا۔ پھر ان کے کانوں میں اذان اور اقامت دی اور ان کا نام حسین رضی اللہ عنہ رکھا۔ ساتویں دن رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے حکم دیا کہ سر منڈوایا جائے اور چاندی کا صدقہ بالوں کے وزن کے برابر دیا جائے۔ اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے عقیقہ کرنے کے بعد ان کے لیے دو بکرے ذبح کیے۔

امام حسین رضی اللہ عنہ کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے چچا عباس کی زوجہ ام الفضل رضی اللہ عنہا نے پالا اور دودھ پلایا۔ وہ بیان کرتی ہیں کہ ایک دفعہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ، امام حسین رضی اللہ عنہ کو اپنی گود میں لیے ہوئے تھے اور بہت خوش مزاج تھے۔ وہ اچانک رونے لگا۔ انہوں نے وجہ دریافت کی۔تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے جواب دیا کہ جبرئیل علیہ السلام نے مجھے ابھی خبر دی ہے کہ میری امت ایک دن میرے اس پیارے بیٹے کو قتل کر دے گی۔ [بیہقی]

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک حدیث میں فرمایا

حسین میرا ہے اور میں حسین کا ہوں۔ اللہ اس سے محبت کرے جو حسین سے محبت کرتا ہے۔ حسین میرا پیارا نواسہ ہے۔ [ابن ماجہ]

امام حسین رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ ان کے نانا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا

‘یہ انسان کے ایمان کی خوبصورتی ہے کہ وہ ان چیزوں کو چھوڑ دیتا ہے جن سے اس کا کوئی تعلق نہیں ہوتا۔’

ابن کثیر لکھتے ہیں کہ سیدنا ابوبکر رضی اللہ عنہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے گھر والوں کا بہت احترام کرتے تھے۔ وہ امام حسین رضی اللہ عنہ سے محبت، پیار اور خصوصی توجہ سے پیش آتے تھے۔ سیدنا عمر اور عثمان رضی اللہ عنہ کا بھی یہی حال تھا۔ [البدایہ، تجلیات صفدر]

جب کسریٰ کی بیٹی شہزادی شہربانو کو اسیروں میں سے مدینہ منورہ لایا گیا تو حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے فرمایا کہ وہ صرف امام حسین رضی اللہ عنہ کے لیے موزوں ہے۔ انہوں نے اسے حسین رضی اللہ عنہ کو دے دیا . امام حسین رضی اللہ عنہ نے انہیں آزاد کر دیا اور ان سے شادی کر لی۔ انہوں نے اپنے بیٹے علی ابن الحسین کو جنم دیا جسے بعد میں ان کی عبادت کی خوبصورتی کی وجہ سے امام زین العابدین کا لقب دیا گیا۔

ابوبکر و عمر رضی اللہ عنہ کی خلافت کے دوران امام حسین رضی اللہ عنہ ابھی بڑے ہو رہے تھے۔ 26ھ میں، عثمانی خلافت کے دوران، آپ نے طرابلس کی فتح میں حصہ لیا۔ اس فتح میں ان کا اہم کردار تھا اور اس کے بعد آنے والے بہت سے دوسرے فتوحات میں بھی اہم کردار ادا کیا۔ 30ھ میں فتح تبرستان اور اس کے بعد جرجان کی فتح میں سعید ابن العاص رضی اللہ عنہ کے ساتھ تھے۔ 34 ہجری میں جب باغیوں نے عثمان رضی اللہ عنہ کی رہائش گاہ کو گھیر لیا اور ان کے خون کے پیاسے تھے تو اس بہادر شہزادے نے نوجوانوں کے ایک گروہ کے ساتھ اپنی جان کا نذرانہ پیش کیا۔ وہ دروازے کے ساتھ کھڑے ہوتے اور باغیوں کو پیچھے کھینچتے ہوئے اس کے گھر کی حفاظت کرتے۔ باغیوں کو ختم کرنے کی بار بار درخواست کرنے اور ایسا کرنے کی صلاحیت رکھنے کے باوجود عثمان رضی اللہ عنہ نے انہیں اپنی حفاظت کے لیے خون کا ایک قطرہ بہانے سے منع کیا۔ آخر کار، باغیوں نے پڑوسیوں کی جائیداد میں گھس کر دیواریں پھلانگیں۔ پھر انہوں نے عثمان رضی اللہ عنہ کو قتل کر دیا۔

عثمان رضی اللہ عنہ کی شہادت کے بعد مہاجرین اور انصار نے علی رضی اللہ عنہ کی بیعت کی۔ حسین رضی اللہ عنہ اپنی خلافت کے پانچ سال اپنے والد کے ساتھ رہے۔ وہ بہت فرمانبردار اور عاجز بیٹے تھے اور اس نے جمال و صفین کی نمایاں لڑائیوں میں حصہ لیا۔ اپنے والد کی شہادت کے بعد آپ نے اپنے بڑے بھائی حسن رضی اللہ عنہ کے ساتھ باپ جیسا سلوک کیا۔ وہ ہمیشہ ان کے ساتھ رہتے اور اہم معاملات میں ان سے مشورہ کرتے۔ صرف 6 ماہ تک خلیفہ رہنے کے بعد حسن رضی اللہ عنہ نے حکومت کی قیادت معاویہ رضی اللہ عنہ کو سونپ دی۔ معاویہ رضی اللہ عنہ اہل بیت کے ساتھ نہایت احترام سے پیش آتے تھے۔ آپ نے سیدنا حسن و حسین رضی اللہ عنہ کے لیے سالانہ ایک لاکھ کا الاؤنس مقرر کیا تھا۔ جب وہ شام کا سفر کرتے یا معاویہ رضی اللہ عنہ مدینہ منورہ تشریف لاتے تو ایک دوسرے کے ساتھ سخاوت اور مہمان نوازی کرتے۔

جب حسن رضی اللہ عنہ کی وفات 50 ہجری میں ہوئی تو حسین رضی اللہ عنہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے خاندان میں سب سے بڑے تھے۔ وہ اس وقت روئے زمین پر سب سے بہترین انسان تھے۔ ایک مرتبہ عبداللہ بن عمرو بن العاص رضی اللہ عنہ حرم شریف میں خانہ کعبہ کے قریب بیٹھے ہوئے تھے کہ حسین رضی اللہ عنہ داخل ہوئے۔ اس نے امام حسین رضی اللہ عنہ کے چمکدار چہرے کی طرف دیکھا اور کہا، ‘اس روئے زمین پر موجود تمام انسانوں میں سے یہ شخص آسمانوں کے فرشتوں کو سب سے زیادہ محبوب ہے۔’ عبداللہ ابن عباس رضی اللہ عنہ ، حسین رضی اللہ عنہ کے گھوڑےکی زین کی رکاب کو پکڑ کر فخر محسوس کرتے۔

حسین رضی اللہ عنہ 10 محرم 61 ہجری کو کربلا میں شہید ہوئے۔ ان کی عمر 57 سال تھی۔

حوالہ جات: شیخ عبدالرحیم لمبادہ

نوٹ کریں کہ یہ اندراج صرف معلومات کے مقاصد کے لیے دکھایا گیا ہے۔ کسی کی بھی قبر پر نماز نہیں پڑھنی چاہیے اور نہ ہی ان سے دعا مانگنا چاہیے کیونکہ یہ شرک کے مترادف ہے، اللہ کے ساتھ کسی کو شریک ٹھہرانا ہے۔

/ Published posts: 3237

موجودہ دور میں انگریزی زبان کو بہت پذیرآئی حاصل ہوئی ہے۔ دنیا میں ۹۰ فیصد ویب سائٹس پر انگریزی زبان میں معلومات فراہم کی جاتی ہیں۔ لیکن پاکستان میں ۸۰سے ۹۰ فیصد لوگ ایسے ہیں. جن کو انگریزی زبان نہ تو پڑھنی آتی ہے۔ اور نہ ہی وہ انگریزی زبان کو سمجھ سکتے ہیں۔ لہذا، زیادہ تر صارفین ایسی ویب سائیٹس سے علم حاصل کرنے سے قاصر ہیں۔ اس لیے ہم نے اپنے زائرین کی آسانی کے لیے انگریزی اور اردو دونوں میں مواد شائع کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ جس سے ہمارےپاکستانی لوگ نہ صرف خبریں بآسانی پڑھ سکیں گے۔ بلکہ یہاں پر موجود مختلف کھیلوں اور تفریحوں پر مبنی مواد سے بھی فائدہ اٹھا سکیں گے۔ نیوز فلیکس پر بہترین رائٹرز اپنی سروسز فراہم کرتے ہیں۔ جن کا مقصد اپنے ملک کے نوجوانوں کی صلاحیتوں اور مہارتوں میں اضافہ کرنا ہے۔

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram