200 views 2 secs 0 comments

ساتواں محرم – ایک سانحہ

In اسلام
July 26, 2023
ساتواں محرم - ایک سانحہ

ساتواں محرم – ایک سانحہ

 

 

 

7 محرم الحرام! جس دن اہلبیت کے صبر کا پیمانہ لبریز ہو گیا۔ حالانکہ وہ خاندان حسین علیہ السلام کے بچے تھے جو تحمل کے عروج پر تھے۔

ساتویں محرم کو اس دن کے طور پر منایا جاتا ہے جب امام حسین علیہ السلام اور ان کے ساتھیوں کے پانی کو خشک کیا جاتا ہے۔ یہ وہ دن تھا جب صرف ’’العطش‘‘ کی آوازیں سنائی دیتی تھیں۔

حضرت قاسم بن حسن علیہ السلام

حضرت قاسم علیہ السلام امام حسن علیہ السلام اور بی بی ام فروہ کے پیارے فرزند تھے جنہیں کربلا کی نوجوان جنگجو کے طور پر جانا جاتا تھا جنہوں نے کربلا کی جنگ میں حصہ لیا۔ محرم کے مقدس مہینے کا ساتواں دن پوری دنیا میں ان کی شہادت کے لیے وقف ہے۔ تاہم پاکستان، ہندوستان اور عراق میں لوگوں نے اس دن کو ان کی مہندی ماننا شروع کر دیا ہے۔

مہندی کیا ہے؟

مہندی ایک ثقافتی تقریب ہے جو پاکستان میں شادی کے دوران کی جاتی ہے۔ تو یہاں سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ لوگ 7 محرم کو حضرت قاسم علیہ السلام کی مہندی کا دن کیوں سمجھتے ہیں اس حقیقت کو مدنظر رکھتے ہوئے کہ مہندی کا واقعہ پوری عرب تاریخ میں کبھی بھی عربی ثقافت کا حصہ نہیں تھا۔ یہ کیسے درست ہو سکتا ہے کہ ایسا واقعہ 1400 سال پہلے ہوا تھا جب اس کی کوئی روایت نہیں تھی۔

اس کا جواب یہ ہے کہ ایسا کبھی نہیں ہوا اور پاکستان بھر میں لوگوں کی ایک بڑی تعداد نے اسے غلط سمجھا ہے۔ یہ بنیادی طور پر غم کے دن پر غالب آنے کے لیے ہے، جس دن امام حسین علیہ السلام اور ان کے ساتھیوں کا پانی خشک ہو گیا تھا۔ یہ وہ دن تھا جب صرف ’’العطش‘‘ کی آوازیں سنائی دیتی تھیں۔ اہمیت دے کر اور خوشی کی زد میں آنے والی صورتحال کو اس دن پیش آنے والے اہم واقعہ کو دبا دیا گیا۔

بہت سے شیعہ مسلمان اس دن کوحضرت قاسم علیہ السلام کی مہندی کے طور پر مناتے ہیں۔ بعض لوگ مبالغہ آرائی کرتے ہیں کہ حضور خواتین نے دلہن کے لیے ایک خیمہ تیار کیا۔ سیدہ زینب سلام اللہ علیہا پانی نہ ہونے کی وجہ سے اپنے آنسوؤں سے مہندی تیار کی۔ غازی عباس علیہ السلام نے خطبہ نکاح پڑھا۔

جبکہ حقیقت کے مطابق، یہ منظر نامہ نہیں تھا! فاطمۃ الکبریٰ بنت حسین رضی اللہ عنہا حضرت حسن مسنہ رضی اللہ عنہ کی زوجہ تھیں۔ مہندی اور شادی جیسا واقعہ کربلا میں نہیں ہوا۔ یہ ایک افسانہ کے سوا کچھ نہیں۔ 13 سال کے لڑکے کی شادی؟ اور سب سے بڑھ کر کربلا میں؟ کربلا محض غموں اور قربانیوں کا مقام ہے جشن اور شادیوں کا نہیں۔

قاسم ابن حسن ع کی مہندی کے جھنڈے گاڑنے والے جلوس کربلا کی یاد میں نہیں ہیں۔ ایسی محفلوں میں موجود لوگ قاسم بن حسن کے بارے میں غلط فہمی کا شکار ہیں۔

کربلا ہمیں یہ نہیں سکھاتی۔ کربلا تمام قوموں اور آنے والی نسلوں کے لیے زندگی بھر کا درس ہے۔ کربلا قربانی کا نام ہے۔ کربلا ایمان اور اسلام کی حفاظت کا نام ہے۔ کربلا ہمیں معاشرتی ناانصافی کے خلاف کھڑے ہونے کا درس دیتی ہے۔ کربلا ہمیں اس بات کے لیے کھڑا ہونے کی ترغیب دیتا ہے جس پر ہم یقین رکھتے ہیں۔ حسین علیہ السلام نے اسلام کے لیے بے لوث موقف اختیار کیا۔ اس نے اپنا خاندان اسلام پر قربان کر دیا۔

اور یہ ہم نے اسلام کے ساتھ کیا ہے۔ بدقسمتی سے، یہ وہ جگہ ہے جہاں ہم جا رہے ہیں! کسی بھی چیز کا نامکمل علم آپ کو مکمل جہالت کی طرف لے جا سکتا ہے۔ یہ بالکل اس مدھم روشنی کی طرح ہے جو آپ کو اندھیرے میں ڈال سکتی ہے۔

اپنا مذہب سیکھو، صرف اس کے وارث نہ بنو!

/ Published posts: 3237

موجودہ دور میں انگریزی زبان کو بہت پذیرآئی حاصل ہوئی ہے۔ دنیا میں ۹۰ فیصد ویب سائٹس پر انگریزی زبان میں معلومات فراہم کی جاتی ہیں۔ لیکن پاکستان میں ۸۰سے ۹۰ فیصد لوگ ایسے ہیں. جن کو انگریزی زبان نہ تو پڑھنی آتی ہے۔ اور نہ ہی وہ انگریزی زبان کو سمجھ سکتے ہیں۔ لہذا، زیادہ تر صارفین ایسی ویب سائیٹس سے علم حاصل کرنے سے قاصر ہیں۔ اس لیے ہم نے اپنے زائرین کی آسانی کے لیے انگریزی اور اردو دونوں میں مواد شائع کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ جس سے ہمارےپاکستانی لوگ نہ صرف خبریں بآسانی پڑھ سکیں گے۔ بلکہ یہاں پر موجود مختلف کھیلوں اور تفریحوں پر مبنی مواد سے بھی فائدہ اٹھا سکیں گے۔ نیوز فلیکس پر بہترین رائٹرز اپنی سروسز فراہم کرتے ہیں۔ جن کا مقصد اپنے ملک کے نوجوانوں کی صلاحیتوں اور مہارتوں میں اضافہ کرنا ہے۔

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram