توشہ خانہ کیس میں 30 صفحات پر مشتمل تفصیلی فیصلے کے اہم نکات یہ ہیں۔

توشہ خانہ کیس میں 30 صفحات پر مشتمل تفصیلی فیصلے کے اہم نکات یہ ہیں۔

توشہ خانہ کیس میں 30 صفحات پر مشتمل تفصیلی فیصلے کے اہم نکات یہ ہیں۔

 

 

توشہ خانہ کیس کے 30 صفحات پر مشتمل تفصیلی فیصلے میں کہا گیا ہے کہ ‘ملزم سابق وزیراعظم عمران خان کا اکاؤنٹ نمبر 3256 ہے جو 22-01-2019 سے 30-06 تک کے دوران 30 ملین روپے کے صرف ایک بڑے ڈپازٹ کی عکاسی کر رہا تھا۔

‘اسکروٹنی کے دوران، ملزمان بینک الفلاح میں جمع کرائی گئی 58 ملین روپے کی رقم ثابت نہیں کر سکے۔ الیکشن کمیشن کے روبرو کارروائی کے دوران ملزمان نے نہ تو خریدار کا نام ظاہر کیا اور نہ ہی کوئی رسید پیش کی۔

‘حوالہ شدہ حقائق ظاہر کرتے ہیں کہ ملزم نے الیکشن کمیشن آف پاکستان کے سامنے غلط بیان اور جھوٹا بیان پیش کیا۔ ملزم نے موقف اختیار کیا کہ اس نے مذکورہ تحائف مزید کسی کو تحفے میں دیے، اس شخص کا نام نہیں بتایا جس کو تحفہ دیا گیا۔

‘اسی طرح، اس نے تحائف کی قیمت کا ذکر نہیں کیا۔ یہ ثابت ہوا ہے کہ ملزم نے سال 2019/2020 کے لیے الیکشن کمیشن اور فارم بی کو غلط بیانات اور جھوٹے ڈیکلریشن پیش کیے ہیں۔ 2020/2021 میں، اس نے فارم-بی میں تحائف کی تفصیلات کا ذکر نہیں کیا۔

حیران کن بات ہے کہ ملزم اور اس کی اہلیہ جو خاتون اول رہ چکی ہیں کے پاس کوئی زیور نہیں ہے۔ اس موقع پر، شکایت کنندہ کے وکیل نے سوال نمبر 25 کے جواب کا حوالہ دیا کہ سوال میں ‘توشہ خانہ’ کے تحائف کی قیمت 107 ملین روپے تھی اور ملزم نے تقریباً 21.5 ملین روپے جمع کرائے تھے۔

ملزم نے صفحہ نمبر 11 پر ایک فہرست کا حوالہ دیا اور کہا کہ اس نے 107 ملین روپے کے یہ تحائف 21.5 ملین روپے میں خریدے اور 58 ملین روپے میں فروخت کئے۔ تاہم، اس اعداد و شمار کا ذکر فارم-B میں نہیں کیا گیا ہے۔

ملزم تحائف کی تخمینہ قیمت کا ذکر کرنے کا پابند تھا۔ تاہم یہاں تک کہ سال 2018-2019 کے فارم-بی میں فروخت کی آمدنی کا ذکر نہیں کیا گیا ہے۔ ملزم نے مذکورہ زیورات کا تذکرہ نہیں کیا حالانکہ اس حقیقت کے کہ فارم بی میں ایک خاص کالم فراہم کیا گیا ہے۔

ملزم اپنی چار بکریوں کا ذکر کرنے سے تھوڑا ہوش میں تھا لیکن زیورات کا ذکر کرنے سے ہوش میں نہیں تھا۔ ملزم اور اس کی بیوی 300 کنال، 7 کنال اور 3 کنال کے تین مکانات کے مالک ہیں اور یہ کہ تینوں گھر 500,000 روپے کے فرنیچر سے لیس ہیں، ایک اور جھوٹا بیان۔

یہ بات کسی شک و شبہ سے بالاتر ہے کہ ملزم نے اپنا فارم بی داخل کرتے وقت اپنے اثاثوں کا جھوٹا اعلان کیا تھا۔ ملزم کی جانب سے اپنے دفاعی بیان میں ایک بار پھر اعتراف کیا گیا ہے کہ متعلقہ اثاثے/آئٹمز فارم – بی میں ظاہر نہیں کیے گئے تھے۔

اس طرح، ملزم نے بے ایمان اور دھوکے باز ہوتے ہوئے، مالی سال 2018-2019، 2019-2020 اور 2020-2021 کے لیے اپنے فارم – بی میں جھوٹے اعلانات کیے، اور اس طرح سیکشن 167 (اے) کے ساتھ پڑھے جانے والے بدعنوانی کے جرم کا ارتکاب کیا۔ الیکشن ایکٹ، 2017 کا 173۔ ملزم نے توشہ خانہ سے تحائف کے ذریعے حاصل کیے گئے اور 2018-2019 اور 2019-2020 کے دوران ضائع کیے گئے اثاثوں کے حوالے سے غلط بیانات/ڈیکلریشن بنا کر اور شائع کر کے بدعنوانی کے جرم کا ارتکاب کیا ہے۔

وہ جان بوجھ کر اور جان بوجھ کر قومی خزانے سے حاصل کیے گئے فوائد کو چھپا کر بدعنوانی کے مرتکب پائے گئے ہیں۔ اس نے توشہ خانہ سے حاصل کردہ تحائف کے بارے میں معلومات فراہم کرتے ہوئے دھوکہ دیا جو بعد میں غلط اور غلط ثابت ہوا۔

اس کی بے ایمانی شک و شبہ سے بالاتر ہے۔ اس کے مطابق، ملزم کو الیکشن ایکٹ 2017 کی دفعہ 174 کے تحت سزا سنائی گئی ہے، اور اسے 100,000 روپے جرمانے کے ساتھ تین سال کی سادہ قید کی سزا سنائی گئی ہے۔ اور عدم ادائیگی کی صورت میں اسے چھ ماہ کی سادہ قید بھی بھگتنا ہوگی۔

/ Published posts: 3237

موجودہ دور میں انگریزی زبان کو بہت پذیرآئی حاصل ہوئی ہے۔ دنیا میں ۹۰ فیصد ویب سائٹس پر انگریزی زبان میں معلومات فراہم کی جاتی ہیں۔ لیکن پاکستان میں ۸۰سے ۹۰ فیصد لوگ ایسے ہیں. جن کو انگریزی زبان نہ تو پڑھنی آتی ہے۔ اور نہ ہی وہ انگریزی زبان کو سمجھ سکتے ہیں۔ لہذا، زیادہ تر صارفین ایسی ویب سائیٹس سے علم حاصل کرنے سے قاصر ہیں۔ اس لیے ہم نے اپنے زائرین کی آسانی کے لیے انگریزی اور اردو دونوں میں مواد شائع کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ جس سے ہمارےپاکستانی لوگ نہ صرف خبریں بآسانی پڑھ سکیں گے۔ بلکہ یہاں پر موجود مختلف کھیلوں اور تفریحوں پر مبنی مواد سے بھی فائدہ اٹھا سکیں گے۔ نیوز فلیکس پر بہترین رائٹرز اپنی سروسز فراہم کرتے ہیں۔ جن کا مقصد اپنے ملک کے نوجوانوں کی صلاحیتوں اور مہارتوں میں اضافہ کرنا ہے۔

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram